Latest News
Restrictions on access to social media sites one more act of state sponsored terrorism (Syed Ali Geelani).......Hizb pays glorious tributes to mujahideen martyred in Panzgam Chowkibal attack........One more Public Safety Act slapped on Teh leaders Ab Hamid Para and Danish Ahmad Malik........late Aman Ullah Khan was a man of principle and pursued mission of freedom with zeal and extreme passion.(Geelani).....Mirwaiz condemns killing of civilian in Kupwara......Malik condemns arrest of Aasiya Andrabi.....Lashkar-e-Taiba condemns Asiya Andrabi's arrest ....Open Muslim enmity by the RSS and Modi-led government highly condemnable.(Syed Salah-u-deen).....Safeguard sanctity, restict daughters from attending NCC camps. Geelani sahib to parents and authorities..... We least care about threats, take care and don't try any adventure.Ayaz akbar to Bal yogi......Anyone forcing people of JK to accept Indian occupation will face public wrath : Aasiyeh......People's aspirations, emotions can't be repressed by military might: Hurriyat (M)......Contribution to freedom movement by Late Amanullah Khan is invaluable.Shah.......JKLF remembers Aman Ullah Khan on his first death anniversary....... Re-arrest of senior Hurriyat leader Masarat Alam Bhat "State Terrorism and disgrace for Indian judicial system.....Mehbooba Mufti illustrates the egoistic and colonial approach of Indian authorities (Hurriyat ).....India has waged war against unarmed Kashmiris: Mirwaiz.... Indian rulers and their Kashmiri stooges had failed to put Kashmiris into submission(Malik)....Police deliberately ruining students career: Jama'at-e-Islami...............Thousands attend funeral of martyred mujahid in Budgam,Muhammad Ashraf Sehrai lead funeral prayers. ..... Instead of containing criminal elements, is backing ''cow vigilantes''terrorists..... Thousands of Sikhs protested in New York demanding for sovereign state in India.....Mirwaiz pays tributes to slain militants....Police foils Geelani's book release function: Hurriyat (G)....Terrorist, rogue Hindutva forces can't extend their agenda in JK: Andrabi,,,,,India's military crackdown in IHK, calls it cruelty and cowardice(New York Times),,,,,.
Article
پہلےادب سے اس نعش کو اُتارو :تحریر::(مسرور ڈار)
[By: Masroor Dar ][ August 01, 2016 ]
کالم
سنو مکینِ کوہسارو ۔۔!ادب سے اس نعش کو اُتارو۔۔!
رسن کا حلقہ ادب سے کھولو۔۔!بلند آواز میں نہ بولو۔۔!
تمام دیوار و در سجاو۔!تمام ماحول کوسنوارو۔۔!
درود پڑھکر،سلام کہہ کر۔۔!یہاں پہ نظرِوفا گذارو۔۔!
ادب سے اس نعش کو اُتارو۔۔! شہید کی نعش کے ادب میں۔۔!تمام تارےخ رُک گئی ہے۔۔! تمام تہذےب جھک گئی ہے۔۔!
ادب سے اس نعش کو اُتارو۔۔!
کشمیر کے فرزند شہےد برہان وانی انتہائی خراج عقےدت اور تعظیم کے مستحق ہیں ۔وہ زندہ تھے توتحرےک آزادی کے نازک ترےن مرحلے پر قوم کی ڈوبتی ہوئی کشتی کو سہارا دےا ، شہےد ہوئے تو پوری قوم کو اےک صف مےں لا کھڑا کرکے اور بڑا کارنامہ سر انجام دےا۔آپ کی شہادت کے بعد وادی کے طول و عرض مےںبھارت مخالف احتجاجوںکا اےک نہ تھمنے والا سلسلہ شروع ہوا جن مےں درجنوں کشمےری شہےد اور ہزاروں زخمی ہوئے۔ چشم فلک نے پہلی بار کسی کشمےری شہےد کے نماز جنازہ مےں لاکھوں لوگوں کی شرکت کا منظر دےکھا ہوگا۔اس کو فےضان ِنظر کہا جائے ےا مکتب کی کرامت ۔۔۔جو اللہ تعالیٰ نے برہان کو بے پناہ خوبےوںسے نوازہ تھا۔آپ اےک ذہےن طالب علم،اےک منجے ہوئے کھلاڑی،اےک نےک سےرت اولاد،اےک پاک دامن مجاہد اور اےک اعلیٰ گورےلا کمانڈر تھے۔عسکرےت کے محاذ پر آپ سرگرم عمل تھے ہی لےکن سوشل مےڈےا کے محاذ پر جو کام آپ نے کےا اس کی تحرےک آزادی مےں نظےر نہےں ملتی۔مےدان عمل مےں آپ کا انداز سب سے جدا گانہ تھا۔آج تک ہمےں عسکری مےدان مےں ےہ دےکھنے کو ملا تھا کہ اےک عسکری کمانڈرexposureسے حتی لامکان بچنے کی کوشش کرتا ہے لےکن آپ آئے دن سوشل مےڈےا پر اپنی اور اپنے ساتھےوں کی تازہ ترےن وےڈےوز اور تصاوےراپ لوڈ کرکے بھارتی اعلیٰ عسکری قےادت اور بھارتی مےڈےا کو ذہنی مرےض بناتے رہے۔ آپ نے اپنی ذہانت سے عسکرےت کے اصولوں کو ہی بدل دےا ۔آپ نے نوجوانوں کا اےک کمانڈو دستہ تےار کےا ۔۔بہت ہی منظم ،منفرد ،متحرک اور چاک و چوبند دستہ۔اس دستے نے آپ کی قےادت مےں بھارتی فوج اور پولےس کو تگنی کا ناچ نچاےا۔آپ کی ان اداوں نے کشمےری نوجوانوں کے دل جےت لئے اور اُنکے جذبوں مےں آگ لگا دی۔آپ کے فن حرب و ضرب سے متاثر ہوکر بےسےوں اعلیٰ تعلےم ےافتہ نوجوانوں نے آپ کے جہادی دستے مےں شمولےت اختےار کی جن مےںMBA,BBAاور انجےنےر نگ کی ڈگرےاں حاصل کرنے والے نوجوان بھی شامل تھے۔آپ کئی سال تک بھارتی فوج پر کاری ضربےں لگاتے رہے۔اور بالآخر8جولائی2016کو کر ناگ کے علاقے مےں اپنے دستے کے دد ساتھےوں سمےت شہادت سے ہمکنار ہوئے۔
آپ شہادت کے متلاشی تھے جو آپ کو مل گئی۔آپ کی شہادت کے بعد کشمےری غےور قوم نے پاکستانی پرچم سےنوں پر سجا کر اےک مرتبہ پھرپاکستانی قوم کو ےہ پےغام دےا کہ ہم آپ سے بے حدپےار کرتے ہےں اور ےہ پےار کا رشتہ اپنی جاں پر کھےل کر بھی نبھائےں گے ۔لےکن قوم کا ےہ شکواہ بھی بجا ہے کہ اب اس رشتے کو چاند اور چکور کے رشتے کی طر نہ رہنے دےا جائے بلکہ دعوے کے مطابق شہ رگ اور جسم کے رشتے مےں بدل دےا جائے۔ ےہ بات ہم کشمےرےوں لئے بہت تکلےف دہ ہے کہ بھارت ہمارے ساتھ خون کی ہولی کھےل رہا ہے اور ہمارے پاکستانی بھائی ہمارے حق مےں مظاہرہ تک نہےں کرسکتے،اقوام متحدہ کے مبصر مشن تک جاکر قرار داد پےش نہےں کرسکتے اور ستم بلائے ستم ےہ کہ عےد کے مبارک موقع پر پاکستانی سنےماوں مےں بھارتی فلم سٹار سلمان خان کی سُپر ہٹ فلم سلطان کی نمائش جاری تھی اسی لئے قاسم کے بےٹوں کو اپنے کشمےری بھائی ےاد نہےں رہے۔ کشمےری مائےں جب اپنے لخت جگروں کو بھارتی فوج پر سنگ باری کرنے کے لئے روانہ کرتی ہےں تو پہلے اُن کے سےنوں پر پاکستانی پرچم سجاتی ہےں اور اُنہی پرچموں مےں لپٹی ہوئی لاشےں جب ماوں کو لوٹائی جاتی ہےں تو مائےں کفن کے بدلے اُنہی پرچموں مےں اپنے بچوں کو دفنانے مےں فخر محسوس کرتی ہےں۔کشمےری قوم پاکستان سے اپنی بے لوث محبت کا بدلہ چاہتی ہے اور اس محبت کا بدلہ سےاسی،اخلاقی اور سفارتی حماےت کا راگ الاپنے سے چکاےا نہےں جا سکتا ۔ پاکستان نے اپنی کشمےر پالےسی پر نظر ثانی کرکے اپنے کشمےرےوں بھائےوںکے لئے اُسی طرح جان کی بازی لگانی ہوگی جس طرح وہ پاکستان کے لئے لگا کر اپنی محبت کا ثبوت پےش کرتے ہےں۔قائد اعظم محمد علی جناح نے کشمےر کو پاکستان کی شہ رگ قرار دےا ہے۔لھٰذا پاکستان کو سوچنا چاہےے کہ اگر شہ رگ کٹ گئی تو جسم بھی سلامت نہےں رہے گا۔ پاکستانی سبز ہلالی پرچم مےں لپٹی ہوئی برھان کی لاش نے ہمےں بھی ےہ پےغام دےا ہے کہ متفرق رہتے ہوئے ےہ جنگ لڑی جاسکتی ہے اور نہ جےتی۔۔۔لہٰذا اےک عظےم مقصد کے حصول کے لئے کُل جماعتی حرےت کانفرنس ،پاکستان مےں موجود مقبوضہ کشمےر کی سےاسی اور عسکری قےادت اورتمام مجاہدےن کےلئے اےک صف مےں کھڑا ہونانا گزےر ہے۔ پھر کردار کی بات ہے۔۔ !جو بھی شخص مخلص ہوکر قوم کی نمائندگی کے لئے اُٹھ کھڑا ہوتا ہے قوم اُس پر اپنی جانےں نچھاور کرکے اُس کو برہان بنا دے گی۔
برہان کی شہادت کے بعد کشمےری عوام کا موت کی پرواہ کےے بغےر سات لاکھ بھارتی فوج کے سامنے سےنہ سپر ہونا روز روشن کی طرح عےاں ہے کہ و ہ بھارت کے ساتھ نہےں رہنا چاہتے ہےں۔ اگر اقوام متحدہ اور عالمی برادری کے پاس ضمےر نام کی کوئی چےز موجود ہوتی تو ےہ مظاہرے کشمےری عوام کا بھارت کے خلاف کُھلم کُھلا رےفرنڈم تھا ۔لےکن اقوام متحدہ اور عا لمی برادری کی مجرمانہ خاموشی سے دشمن کے حوصلے بلند ہوتے جا رہے ہےںاور وہ ہمارا مزےد خون بہانے سے نہےں کتراتا۔لےکن کب تک۔۔!برہان بھائی کشمےر کے پہلے شہےد تھے نہ آخری۔شہادتوں کا ےہ سفر ابھی جاری ہے۔ حزب المجاہدےن کے سابقہ آپرےشنل کمانڈر برہان الدےن حجازی کے کردار نے برہان وانی کو جنم دےااور برہان وانی کی شہادت کے بعدکشمےر کے ہر گھر سے برہان نکلےں گے۔آخر بھارت کتنے برہان مارے گا۔۔۔۔۔۔۔!!! برہان وانی کے ساتھ اُن کے اور دو ساتھی خالد بھائی اور فراز بھائی بھی شہےد ہوگئے۔ان تےن شہدا پر نعےم صدےقی کی ےہ آزاد نظم کس قدر صادق آتی ہے۔
یہ تین لاشیں۔۔۔یہ ایک ،دو ،تین تازہ لاشیں
نئی نئی فصل زندگی کی ۔۔۔۔!
ہری بھری فصل زندگی کی۔۔۔۔!
ابھی ابھی پل میں کٹ گئی ہے۔۔۔۔!
یہ تین لاشیں۔۔۔۔!اور اُن کے پیچھے ہزراوں لاشیں۔۔۔۔!
میرے چمن کی یہ تین شاخیں کٹی پڑی ہیں۔۔۔۔!
یہ تیں غنچے مثل گئے ہیں۔۔۔۔!
مگر ذرا نقط نظر کو ،میرے رفیقو بدل کے دےکھو ۔۔۔۔!
یہ تین غنچے نئے کھلے ہیں۔۔۔۔!
ہماری تاریخ کے چمن میں ہوائے فصل بہار آئی۔۔۔۔!
بہ شاخ اےثار مومنانہ نئے سرے سے نکھار آئی۔۔۔۔!
جھڑی لگی ہے پھوار آئی۔۔۔۔! یہ تین غنچے نئے کھلے ہیں۔۔۔۔!
یہ تین غنچے مہک رہے ہےں۔۔۔۔!
یہ تین تارے چمک رہے ہیں۔۔۔۔!
یہ تین موتی دھمک رہے ہیں۔۔۔۔!
یہ تین تارے چمک رہے ہےں۔۔۔۔!
یہ تینوں بام حرم کے طائر۔۔۔۔!
جو تیر کھا کر پھڑک رہے ہیں۔۔۔۔!
یہ تین لاشیں ۔۔۔۔!یہ پیاری لاشیں
یہ زندگی ہماری فساد پےہم کہ جس میں کوئی سکون نہیں ہے۔
تمام سود و زیاں کے چکر! کہیں فروغ جنوں نہیں ہے۔
یہ زندگی ہماری عذاب دوزخ! کہ جس میں سوز دُروں نہیں ہے۔
اور یہ تین لاشیں !مجھے ایسے لاکھوں کی زندگی سے گراں بہاتر!
ہٹو کرائے کے چوب دارو!مجھے قدم اِن کے چومنے دو!میری عقیدت کو جھومنے دو!
یہ تین لاشیں! یہ پیاری لاشیں!

Find us on facebook
Find us on twitter
News Archives
December 2016
Sun Mon Tues Wed Thu Fri Sat
01 02 03
04 05 06 07 08 09 10
11 12 13 14 15 16 17
18 19 20 21 22 23 24
25 26 27 28 29 30
     
News Archives
November 2016
Sun Mon Tues Wed Thu Fri Sat
01 02 03 04 05
06 07 08 09 10 11 12
13 14 15 16 17 18 19
20 21 22 23 24 25 26
27 28 29 30
     
News Archives
September 2016
Sun Mon Tues Wed Thu Fri Sat
01 02 03
04 05 06 07 08 09 10
11 12 13 14 15 16 17
18 19 20 21 22 23 24
25 26 27 28 29 30